اب گھر پر ہی فوری کرسپی اور مزیدار جلیبیاں بنائیں

سردیوں کا موسم ہو اور گرما گرم جلیبیاں نہ ہوں تو سردی کا مزہ ہی نہیں آتا۔جلیبی ایسی چیز ہے جو ہر کوئی ذوق و شوق سے کھاتا ہے۔ کوئی بھی خوشی کا موقع ہو یا ہو کوئی تقریب، تو جلیبی نام ہی ایسا ہے کہ گھر گھر لائی جاتی ہے اور نہ صرف خود کھائی جاتی ہے بلکہ دوستوں، رشتہ داروں میں بھی بانٹی جاتی ہے۔ آپ نے دیکھا ہو گا کہ پاکستان کی روایت بھی ہے اور رواج بھی کہ شبِ معراج یا شبِ بارات کے موقع پر اکثر جلیبیاں بانٹی جاتی ہیں اور جلیبیاں بنانے والے حلوائیوں کی دوکانوں پر جلیبی لینے والوں کا رش ہی رش ہوتا ہے اور اکثر تو پہلے سے ہی آرڈر بُک کروانا پڑتا ہے اور اکثر باری نہیں بھی آتی، تو ان سب جھنجھٹوں سے بچنے کے لیے ہم نے سوچا کہ کیوں نہ آپ کے لیے جھٹ پٹ اور بالکل حلوائی جیسی جلیبی بنانے کی منفرد سی ریسیپی لے کر آئیں۔ تو آئیے آج آپ کو بہت ہی لذیذ اور جھٹ پٹ بننے والی جلیبی کا آسان سا طریقہ بتاتے ہیں تا کہ آپ بھی پرفیشنل جلیبیاں بنانے میں ماہر ہو جائیں۔

اجزاء

چاشنی بنانے کے لیے

چینی ————— 1 کپ
پانی —————- آدھا کپ
الائچی ————– ایک عدد (کُٹی ہوئی)
لیموں ————- آدھا ( رس )

جلیبی بَیٹر بنانے کے لیے

میدہ ————— 1 کپ
چاول کا آٹا یا کارن فلور ——— 2 ٹیبل سپون
دہی ————— 2 ٹیبل سپون
پانی ————— آدھا کپ
زردہ رنگ ———– ایک چٹکی ( اگر آپکو کلرڈ جلیبی پسند ہے تو زردہ رنگ ڈالیں )
بیکنگ سوڈا ——— چوتھائی چمچ

فرائی کرنے کے لیے

گھی —————- 2 کپ

بنانے کا طریقہ

سب سے پہلے ہم چاشنی یعنی کہ شیرا بنائیں گے۔ ایک گہرے برتن میں چینی ڈالیں اور پانی ڈال دیں ۔ چینی اور پانی کو درمیانی آنچ پر پکائیں۔ چینی کے پگھلنے تک اس کو پکاتے رہیں اور چمچ بھی ہلاتے رہیں۔ یہاں یہ بات یاد رکھیے گا کہ چاشنی بنانے کے لیے جتنی چینی لیں گے اُس سے آدھا پانی ڈالیں گے۔اور تب تک پکائیں گے جب تک چینی پگھلنے کے بعد ہاتھوں کو چِپکنا شروع ہو جائے۔جب چاشنی ہاتھوں کو چپکنا شروع ہو جائے تو آنچ بالکل دھیمی کر دیں گے اور اس میں آدھے لیموں کا رس ڈالیں گے تا کہ جلیبیوں پر ایک الگ سی چمک آ جائے۔ اس کو اچھی طرح مکس کر کے چولہا بند کر دیں۔یہاں یہ بات ذہن نشین کر لیجیے کہ چاشنی بنانے کے لیے تار والا شیرا تیار نہیں کرنا بلکہ جیسے ہی چینی پگھل جائے اور ہاتھوں کو چپکنا شروع ہو جائے تو لیموں ڈال کر چولہا بند کر دینا ہے، ورنہ جلیبی خراب ہو جائے گی۔

اب ہم جلیبی کا بیٹر یا ڈَو تیار کریں گے۔ ایک باؤل میں سب سے پہلے میدہ لیں گے ۔ اب اس میں چاول کا آٹا اور دہی ملا لیں۔ ان تینوں چیزوں کو اچھی طرح سے مکس کر لیں۔ اب اس آمیزے میں تھوڑا تھوڑا سا پانی ڈال کر اچھی طرح مکس کرتے جائیں تاکہ گھٹلی نہ بننے پائے۔ اگر سارا پانی ایک ہی بار ڈال دیں گے تو گٹھلیاں بن سکتی ہیں۔ اس آمیزے کی مکسنگ بہت اچھی طرح کیجیے گا تا کہ جلیبی بہت اچھی اور خستہ تیار ہو۔ اب اس میں زردہ رنگ ڈال دیں اگر آپ کو پسند ہے تو ۔ ورنہ آپ کلر نا بھی ڈالیں تو اچھی جلیبی بنے گی۔ اب اس آمیزے کو 10 منٹ کے لیے ڈھک کر رکھ دیں۔ اس آمیزے کو 10 منٹ کا ریسٹ دینا ہے، لیکن یہ بات یاد رکھیے کہ اس آمیزے کو فریج میں بالکل بھی نہیں رکھنا بلکہ رُوم ٹمپریچر پر ہی اسے ریسٹ دینا ہے 10 منٹ کے لیے۔ اور پھر 10 منٹ کے بعد اس میں بیکنگ سوڈا ڈال کر اچھی طرح مکس کر لیں۔

اب جلیبی فرائی کریں گے۔ ایک پین میں جس کا پینڈہ سیدھا ہو، میں گھی لے لیں۔ اسے گرم کر لیں۔ یہاں یہ بات بتاتے چلیں کہ آپ کوکنگ آئل میں بھی جلیبی بنا سکتے ہیں مگر گھی میں بنانے سے زیادہ خستہ بنتی ہیں۔ اب یہ آپ کی چوائس ہے کہ آپ گھی کا استعمال کرتے ہیں یا آئل کا۔ ہم اس ریسیپی میں جلیبی فرائی کرنے کے لیے گھی کا استعمال کر رہے ہیں۔ جب گھی پگھل جائے تو آنچ ہلکی کر دیں۔ اب آپ کوئی سا بھی کپڑا لے لیں یا پھر کیچپ کی بوتل بھی لے سکتے ہیں نوزل والی۔ اُس سے جلیبی بنا سکتے ہیں۔ ہم یہاں کپڑے کا آپ کو بتا رہے ہیں۔ جلیبی والا آمیزہ جو آپ نے تیار کرنا ہے اس کو ایک رومال کی طرح چورس کپڑے پر رکھیں اور اس کپڑے کو چاروں سائیڈوں سے پکڑ لیں اور اس کے درمیان سے کاٹ کر بالکل باریک سوراخ کر لیں۔ اب گرم آئل میں جس طرح کا ڈیزائن آپکو پسند ہے اور جو سائز پسند ہے کپڑے کی مدد سے ڈالتے جائیں اور درمیانی سے ہلکی آنچ پر ان کو 3 سے 4 منٹ کے لیے فرائی کریں اور پھر ان کی سائیڈ چینج کریں اور 2 منٹ کے لیے فرائی کریں۔ جب فرائی ہو جائیں تو انہیں نکال کر شیرے میں ڈال کر اچھی طرح ڈِپ کریں سائیڈ بدل بدل کر تا کہ اچھی طرح شیرا ہر طرف لگ جائے۔ اور پھر کسی ایسی چیز میں رکھیں جس سے ایکسٹرا شیرا نُچڑتا رہے۔ اسی طریقے سے آپ ساری جلیبیاں بنا لیں اور مزے مزے کی گرما گرم جلیبیاں نوش فرمائیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *